Jagmeet Singh the deputy Prime ministor of Canada speak for Kashmir 358

نومنتخب کینڈین نائب وزیر اعظم جگمیت سنگھ کشمیریوں کے حق میں بول پڑے

کینیڈا کے نیو ڈیمو کریٹک پارٹی کے نو منتخب نائب وزیر اعظم جگمیت سنگھ ایک انتہائی دلچسپ شخصیت ہے ایک طرف جہان جگمیت سنگھ پہلی دفعہ ہی نائب وزیر اعظم کی کرسی تک پہنچنے میں کامیاب ہوئے ہیں وہیں وہ بھارت میں سکھ تحریک اور خالصتان کے زبردست حامی بھی ہیں۔

وہ بین الاقوامی میڈیا سے بات کرتے ہوئے انتہائی جارحانہ رویے میں بھارت کے اندر سکھوں کے ساتھ ہونے والے سلوک پر بات کرتے ہیں، ان کے بات کرنے کے انداز سے لگتا ہے کہ جنوبی ایشیاء میں آزادی کی تحریکوں اور خاص کر سکھ اور کشمیری تحریک پر ان کا مطالعہ کافی وسیع ہے۔

دو روز قبل اپنی انتخاب کے دوسرے دن ہی وہ ٹاؤں حال میں تقریر کرنے آئے تو انہوں نے اپنی تقریر کے آغاز میں ہی کشمیر کا ذکر کیا اور کہا کہ جو کچھ کشمیر میں ہو رہے ہیں اس میں بھارتی حکومت کے مختلف چہرے نظر آتےہیں انہوں نے کہا

“کشمیر میں ٹیلفون سروس، اور موبائل فون سروس کے ساتھ ساتھ میڈیا پر بھی پابندی ہے۔ دنیا میں کہیں بھی جہاں ٹیلیفون اور موبائل فون بند ہوں اور میڈیا کو وہاں جانے کی اجازت نہ ہو تو میں آپ کو یقین دلا سکتا ہوں کہ وہاں بنیادی انسانی حقوق کی خلاف ورزی ہو رہی ہے۔”

“میں کشمیر کے لوگوں کو یہ بتانا چاہتا ہوں کہ ایک جمہوری رہنما کی حیثیت سے میں آپ کے ساتھ کھڑا ہوں، یکجہتی کرتا ہوں اور اگر کسی کے ساتھ بھی ناانصافی ہو رہی ہو گی تو ہمیں محسوس ہو گا کہ ہمارے ساتھ ناانصافی ہو رہی ہے۔ اور ہم لوگوں کے ساتھ کھڑے ہیں جو جدوجہد کر رہے ہیں، جن کو بھی جدوجہد کا سامنا ہے۔”

“میں آج کی شام کشمیر کے لوگوں کے بتانا چاہتا ہوں کہ میں جو ناانصافی لوگوں کے ساتھ ہو رہی ہے اس کے خلاف آپ کے ساتھ کھڑا ہوں، میں ناانصافی کے خلاف کھڑا ہون اور میں انڈیا جو بھی کشمیر میں کر رہا ہے اس کی مذمت کرتا ہوں”