161

پاکستانی زیر انتظام جمون کشمیر “کشمیر چھوڑ دو” کے نعروں سے گونج اٹھا

مظفرآباد (کشمیریت) پاکستانی زیرا نتظام ریاست جموں کشمیر کے حصے میں 26 اگست نے ایک نئی تاریخ رقم کی۔ آزادی پسند اور نیشنلسٹ جماعتوں کے اتحاد پیپلز نیشنل الائنس کی کال پر میر پور سے نیلم تک 26 اگست کو “ریاست جموں کشمیر چھوڑ دو تحریک” کا پہلا روز منایا گیا۔

“ریاست جمون کشمیر چھوڑ دو” تحریک کے پہلے مرحلے میں میر پور ، راولاکوٹ، کوٹلی، بھمبر، باغ، ہجیرہ ، مظفرآباد، اور نیلم ویلی سمیت آزاد کشمیر کے تمام اضلاع میں ریلیاں نکالی گئیں جس میں لوگ پاکستان اور ہندوستان سے ریاست جمون کشمیر چھوڑنے کی مانگ کر رہے تھے۔ اس موقع پر ہزاروں کی تعداد میں لوگوں نے شرکت کی۔

پاکستانی زیر انتظام کشمیر میں ترقی پسند اور قوم پرست تنظیموں پر مشتمل جموں کشمیر پیپلز نیشنل الائنس کے زیر اہتمام ”جموں کشمیر چھوڑ دو تحریک“ کا آغاز کر دیا گیا ہے،

اس موقع پر لوگوں نے ریاست سے دونوں افواج کے مکمل اںخلاء کا مطالبہ کیا

چھبیس اگست پیر کے روز پاکستانی زیر انتظام کشمیر کے ضلعی اورتحصیل ہیڈکوارٹرز کے علاوہ پاکستانی شہر راولپنڈی میں احتجاجی مظاہرے منعقد کئے گئے ہیں جن میں ہزاروں کی تعداد میں سیاسی کارکنوں اور عام شہریوں نے شرکت کرتے ہوئے پیپلز نیشنل الائنس کی جانب سے شروع کی گئی تحریک پربھرپوراعتماد کا اظہار کیا ہے۔

 پیرکے روز مظفرآباد، راولاکوٹ، میرپور، کوٹلی، باغ، سدھنوتی، بھمبر، ہجیرہ، عباسپور، راولپنڈی اور دیگر مقامات پراحتجاجی ریلیاں اور جلسے منعقد کئے گئے ہیں۔ تین ستمبر کو مظفرآبادکے مقام پر پی این اے کے آئندہ اجلاس میں تحریک کے مستقبل کا لائحہ عمل ترتیب دیا جائیگا۔